Browsing Category

غزلیں و افسانہ

کون صحیح اور کون غلط؟

استانی حسنیٰ پہلی جماعت کے بچوں کو ریاضی پڑھا رہی تھیں۔ آپ نے اسمٰعیل سے پوچھا: ”اگر میں تم کو دو آم دوں اور اس کے بعد دو اور آم دوں، تو تمہارے پاس کتنے آم آجائیں گے؟“ اسمٰعیل نے جواب دیا:”پانچ“ استانی حسنیٰ نے اپنے دائیں ہاتھ سے دو…

غزل

پریم ناتھ بسمل مرادپور، مہوا، ویشالی۔ بہار جو محفل میں ہم روبرو بیٹھتے ہیں عجب سی نگاہوں سے وہ دیکھتے ہیں ادا ہے محبت کی یہ بھی نرالی جو میں پاس آو¿ں تو وہ بھاگتے ہیں گزرتا ہے دل پر ستم اور بھی جب نکلنے کو باہر وہ در کھولتے ہیں تجھے…

کہانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قربانی کے بکرے اور رشو

کہانی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ قربانی کے بکرے اور رشو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ کی کرونا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ چڑیل ۔۔۔۔۔۔۔۔۔ محمد سراج عظیم دہلی ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ لاک ڈاوءن کو…

غزلیں

جلال عظیم آبادی بنگلا دیش فریب دے گیا میرا ہی رازدار مجھے بتاﺅ کس پہ ہو اب اور اعتبار مجھے تو خواب ہی میں سہی مل تو ایک بار مجھے مریض عشق ہوں تیرا ملے قرار مجھے ہجوم شوق کو تکتی رہی نگاہ مری وہی نہ آ سکا تھا جس کا انتظا ر مجھے اسی…

غزل

٭٭٭٭٭٭٭٭ اب سیاست میں جو سالار ہوا کرتے ہیں کتنے معصوم ریاکار ہوا کرتے ہیں جو یہاں عشق کے بیمار ہوا کرتے ہیں حسن کے کب وہ پرستار ہوا کرتے ہیں جو کوئی صاحبِ کردار ہوا کرتے ہیں ان کے چہرے تو چمکدار ہوا کرتے ہیں کیا پری چہرے بھی غمخوار…

غزل

آنکھوں میں غم کی لالیاں دل میں ملال تھا مجھ سے بچھڑ کے بھی وہ مرا ہم خیال تھا مجھ سا شریف شخص کو شاعر بنا دیا اللہ جانے حسن میں کیسا کمال تھا اتنا تو میرے عشق میں بھی معجزہ ہوا مدت کے بعد بھی مرے غم میں نڈھال تھا میں کیا کہ مجھ سا…

ویلنٹائن ڈے

صبح کی چائے کے ساتھ میں اخبار کے مطالعے میں مصروف تھا. تبھی خوشبوؤں کے جھونکے سے فضا معطر سی ہوگئی. میں نے چونک کر سر اٹھایا تو دیکھا میرا پوتا جواد سرخ گلابوں کے کئی بوکے اپنے ہاتھوں میں سنبھالے کھڑا تھا. اس کے چہرے پہ…

"دھوپ کا مسافر” : پُرعزم شاعر کا حسین تحفہ 

      تحریر: تبریز فراز محمد غنیف      اردو شاعری  کو سینچنے سنوارنے اور پروان چڑھانے کے حوالے سے بات کی جائے تو میر ، غالب ، اقبال،مومن،جوش،فراق،فیض احمد فیض، احمد فراز وغیرہ کا نام جلی حروف سے لکھا جاتا رہا ہے اور آئندہ بھی لکھا جاتا…

. . . .  معصوم کلی

افسانہ رات کے تین بج رہے ہیں لیکن میری آنکھیں نیند سے خالی ہیں باہر رات کا سناٹا ہے تو میرے دل و دماغ میں ایک شور سا برپا ہے بار بار یہی سوال کہ "ایسا کیوں ہے " سونے کا ارادہ لیکر تکیہ سے سر لگا کر آنکھیں جیسے ہی بند کرتی ہوں…

غزل

یاد رکھتا ہوں میں یادوں کے خزانے تیرے کتنے سلجھے تھے وہاں اپنے بیگانے تیرے مدعی تھی تیری پرجا تو تھامنصف اپنا لوٹ ائیں گےکہاں ایسے زمانے تیرے تو تھا مہاراج شیواجی تیری عظمت کوسلام ہندو مسلم بھی تھے سکھ بھی تھے دیوانے تیرے درد دکھتا…