سادگی کےساتھ مسلمان منائیں عید بازار سے رہیں دور: عبدالسمیع سلفی

0 53

 

 مدہوبنی(نمائندہ )لاک ڈاون میں جزوی نرمی کا فائدہ اٹھاتے ہوئے ہماری مائیں بہنیں جس انداز میں بازاروں کی زینت بن رہی ہیں اس حوالے سے
مولانا عمرفاروق قاسمی استاد پلس ٹو ہائی اسکول بسفی نے کہا کہ کرونا کے مریضوں کی تعداد میں جس طرح بے تحاشہ اضافہ ہورہا ہے اس سے ملک تشویش ناک صورتحال کی طرف جارہا ہے ‘ایسی صورت حال میں مسلمانوں بالخصوص مسلم ماوں اور بہنوں کو بازاروں کی آمد و رفت سے گریز کرنی چاہیے ورنہ گودی میڈیا بازاروں میں نقاب پوش مسلم ماوں اور بہنوں کی بھیڑ بھاڑ کو کرونا وائرس کا ذمہ دار ٹہرائے گا ‘مسلم دشمن طاقتیں آپ کے روپے سے منافع بھی کمائیں گی اور آپ کو بدنام بھی کریں گی یعنی ایک تیر سے دونشانہ ہوگا ‘انہیں مالی منفعت بھی حاصل ہوگی اور بازاروں میں بھیڑ بھاڑ کے حوالے سے ہم ہی بدنام ہونگے ‘اس لئے مسلمان اس سال عید کی خریداری سے گریز کریں اور وہ رقم غربا و مساکین کی امداد اور فاقہ کشوں کو آسودہ کرنے میں خرچ کریں یاد رکھیں ‘مسلم دشمن طاقتیں آپ ہی کا جوتا آپ ہی کے سر ماریں گی اس لئے مسلمان بازاروں کی زینت نہ بنیں جلوت کی جگہ خلوت نشینی کو ترجیح دیں ‘
عید کی خریداری کے حوالے سے معروف عالم دین مولانا عبدالسمیع سلفی پرنسپل شیو گنگاپلس ٹو گرلس ہائی اسکول مدہوبنی نے اپنے خیال کا اظہار کرتےہوئے کہا کہ امسال عید میں سادگی یقینی طور پر بےحد ضروری ہےاور اس کے ہمہ جہت فائدے ہیں جس کو اہل علم جانتے ہیں مگر افسوس کی بات ہے کہ ادھر حکومت کی طرف سے لاک ڈاون میں جزوی نرمی ہوئی ہے لوگ اس کا غلط استعمال کررہےہیں انہوں نے کہا کہ غیر مسلموں میں مسلمانوں کے سادگی کے ساتھ عید منانے اور غربا کو مدد کئے جانے کے جزبے کی بڑی تحسین ہورہی ہےاور اس کی تائید بھی ہورہی ‘
جبکہ ضلعی جمیعت اہل حدیث مدہوبنی کے صدر مولانا حافظ صغیر احمد مدنی ناظم اعلی مدرسہ اسلامیہ مدہوبنی نے یہ درد مندانہ اپیل کی کہ امسال عید کی تیاری سادہ بھی ہو اور مختصر بھی ‘یہ وقت کی ضرورت بھی ہے اور مفید بھی ‘یہ ضروت اور افادیت نہ صرف دور رس بلکہ وسیع مفادات کو شامل ہے اور وقت کا مطلوب بھی ہے ۔غالبا اسی پس منظر میں مسلمانوں کے تمام مکاتب فکر کے علما اس کی اپیل کر رہےہیں

Leave A Reply

Your email address will not be published.