دہلی محکمہ صحت ’’تبلیغی مرکز‘‘ کے متاثرین کا الگ سے کورونا وائرس کے چارٹ میں ذکر نہ کرے

0 30

نئی دہلی: ۹؍اپریل ۲۰۲۰: دہلی اقلیتی کمیشن نے اپنے ایک خط میں حکومت دہلی کے محکمہ صحت سے مطالبہ کیا ہے کہ کورونا وائرس کے متاثرین کے بارے میں اپنے بیانات میں ’’تبلیغی مرکز‘‘ کا الگ سے ذکر نہ کرے ۔  دہلی اقلیتی کمیشن کے صدر ڈاکٹر ظفر الاسلام خان نے محکمہ صحت کے ڈائرکٹر/سکریٹری کو اپنے خط میں لکھا ہے: ’’کورونا وائرس کے متاثرین کے بارے میں آپ کے روزانہ  بلیٹن میں "مرکز تبلیغ” کا خانہ بنا ہوا ہے۔ متاثرین کی اس طرح کی بلا سوچے سمجھے درجہ بندی سے گودی میڈیا اور ہندوتوا طاقتوں کے اسلام دشمن ایجنڈے کو فائدہ مل رہا ہے اور اسے بڑی آسانی سے پورے ملک میں مسلمانوں پر حملہ کرنے کا ذریعہ بنالیا گیا ہے۔ اس کا نتیجہ ہے کہ پورے ملک میں مسلمانوں کے سماجی بائیکاٹ کی بات ہورہی ہے، ایک نوجوان کی دہلی کے شمالی مغربی ضلع کے گاؤں ہریولی میں لنچنگ ہوچکی ہے اور دوسروں پر حملے ہورہے ہیں”۔

اقلیتی کمیشن کے خط میں مزید کہا گیا ہے کہ عالمی تنظیم صحت کے ایمرجنسی پروگرام کے ڈائرکٹر مائک ریان نے ۶؍اپریل کو کہا تھا  کہ حکومتوں کو کورونا کے متاثرین کی مذہبی یا اسی طرح کسی اور بنیاد پر خانہ بندی نہیں کرنی چاہیے۔ دو دن بعد انھوں نے دنیا بھر کی حکومتوں سے کہا کہ کورونا کے معاملے میں سیاست نہ کی جائے اور لوگوں کی درجہ بندی مذہب کی بنیاد پر نہ کی جائے۔ اسی دن  (۸؍اپریل) کو ہندوستانی وزارت صحت نے بھی اپنے بیان میں کہا: ’’اگر ساری احتیاط کے باوجود کوئی شخص کورونا کا شکا ہوتا ہے تو یہ اس کی غلطی نہیں ہے۔ ایسی مشکل صورت حال میں مریض اور اس کے خاندان کے ساتھ مدد اور تعاون  کا سلوک ہونا چاہیے۔ لوگوں کو مریضوں  اور قرنطینہ میں ڈالے گئے لوگوں کے نام اور شناخت ظاہر نہیں کرنا چاہیے اور نہ ہی اس کی رہائش کے مقام کو سوشل میڈیا پر عام کرنا چاہیے”۔

دہلی اقلیتی کمیشن نے دہلی محکمہ صحت کو اپنے خط میں لکھا ہے کہ وہ کسی ایسے اعدادوشمار کو شائع نہ کرے جس میں مذہبی اشارہ ہو یا جس کو سیاسی یا فرقہ وارانہ مقصد کے لیے خود غرض لوگ استعمال کرسکیں

Leave A Reply

Your email address will not be published.