Select your Top Menu from wp menus

مودی راج میں جھوٹ افترا پروازی کی بھی انتہا

مودی راج میں جھوٹ افترا پروازی کی بھی انتہا

نقاش نائطی
+966504960485

*عموما لوگ نہ صرف جھوٹ بولنے سے احتراز کرتے ہیں بلکہ جھوٹ بولنے والے کو ناپسند بھی کیا جاتا ہے لیکن دیش کا پرائم دیش کے نامور میڈیا ھاوس، نیوز نیشن کو دئے گئے انٹرویو کے درمیان دھڑلے سے جھوٹ بولے تو تعجب لگتا ہے۔اس انٹرویو میں مہان مودی جی نے بے خوف ہوکر کہا تھا کہ 87 یا 88 میں انہوں نے ڈیجیٹل کیمرہ کا نہ صرف استعمال کیا تها بلکہ ورم گام تحصیل میں، ایڈوانی جی کی ریلی کی تصویر کو انہوں نے، ان کے پاس موجود بڑے سائز کے ڈیجیٹل کیمرے سے تصویر اتارتے ہوئے، اسے دلی کو ٹرانسمٹ کردیا تھا۔ اور وہ تصویر دوسرے دن اخبار میں چھپی تو ایڈوانی جی کو تعجب ہوا تھا کہ دلی میں انکی فوٹو آج کے اخبار میں کیسے چھپ گئی۔اپنے جھوٹ کو سچ میں بدلنے کے لئے مہان مودی جی یہاں تک کہہ دیا تھا کہ ان ایام بہت کم لوگوں کے پاس ای میل ہوا کرتا تھا۔ ہندستان میں 1991 شری نرسمہاراؤ کے کانگریس پارٹی حکومت کے پی ایم رہتے، گاندھی جینتی کے دن 2 اکتوبر 1991 کو دیش کی اکلوتی سرکاری ٹیلی کومیونیکیشن کمپنی، بی ایس این ایل نے، دیش میں پہلی مرتبہ ای میل لانچ کیا تھا۔اس سے پہلے ہندستان میں نہ کسی کے پاس ای میل سروس تھی اور نہ ای میل کسی کو بھیجا جاسکتا تھا۔ 24 فروری 1992 تک پورے ہندستان میں، صرف سو ای میل یوسر تھے مارچ 1992 میں ہندستان سے پہلا ای میل اٹیچمنٹ کوئی فوٹو نتهانی بورس نے امریکہ بھیجا تھا لیکن مسٹر پھینکو مودی جی نے، اس سے چار پانچ سال قبل ہی ایڈوانی جی کی ریلی کی فوٹو، ای میل اٹیچمنٹ کے ذریعے دہلی بهیجنے کا جهوٹا دعوہ کردیا ہے.*
*کسی بھی سیاست دان سے لائیو انٹرویو کا مطلب میڈیا کے برجستہ پوچھے سوالات کو برجستہ جواب دینا ہوتا ہے ۔ لائیو انٹرویو میں کسی سوال کا برجستہ جواب دیتے ہوئے،کوئی بتائی ہوئی تاریخ غلط کہی جاسکتی ہے لیکن مہان مودی جی نے غلطی سےغیر سہوا کوئی تاریخ پیش کرنے میں غلطی نہیں کی تھی بلکہ تاریخ بتاتے ہوئے ایڈوانی جی کی ریلی کا تذکرہ کیا تھا وہ ریلی انکی بتائی ہوئی تاریخ غالبا 87 یا 88 صحیح ہے لیکن اس ریلی کی تصویر ان کے پاس موجود ڈیجیٹل کیمرے سے نکالنے اور بذریعہ ای میل دہلی بھیجنے کی خبر نہ صرف جھوٹ ہے بلکہ ناقابل یقین جھوٹ ہے۔ کیونکہ اس واقعہ کے تین یا چار سال بعد ہندستان میں بی ایس این ایل نے ای میل سروس لانچ کی تھی۔ یہ کیسے ممکن ہے کہ دیش میں ای میل سروس لانچ ہونے سے چار ایک سال پہلے مودی جی نے وہ سروس استعمال کی ہو؟ یہ تو ایسے ہی ہوا جیسا کہ کسی بی جے پی مرکزی منسٹر نے بالمیکی کے لکھے رامائن میں راون کے اڑن کھٹولے میں اڑنے کی بات پر، ہزاروں سال پہلے ہندستان میں ہوائی جہاز ایجاد کرنے کا دعوہ کیا ہو؟ دوسری اہم بات نیوز نیشن کو مودی جی کا دیا وہ لائیو انٹرویو نہیں تھا بلکہ لائیو انٹرویو کے اوصول کے خلاف میڈیا ہاوس کی طرف سے، لائیو انٹرویو ڈرامے میں پوچھے جانے والے سوالات قبل از وقت پی ایم ہاوس کو دئیے گئے تھے اور 56′ سینے والے مہان مودی جی کسی اسکولی بچے کی طرح پہلے سے تیار جوابات نہ صرف رٹ کر آئے تھے بلکہ ٹائپ شدہ سوالات و جوابات انٹرویو دوران انکے پاس موجود تھے جسے دیکھ کر مودی جی جواب دے رہے تھے۔ پہلے سے پوچھے گئے سوالات کے جوابات دینے کی تیاری کے باوجود، مودی جی نے اتنے سارے جھوٹ بولے تھےکہ الامان والحافظ*

*14 فروی پلوامہ حملہ کے بعد 26 فروری 2019 کی رات پڑوسی دشمن ملک پاکستان کے اندر گھس کر، بالاکوٹ میں موجود جیش محمد کے آتنگ وادی کیمپوں کو تباہ کرنے کا دیش کی گورتا پوروک فضائیہ نے سرجیکل اسٹرائیک ٹو کا پلان بنایا تھا۔ اس رات میں(پی ایم مودی جی) بھی وار روم میں تھا۔26 فروری کی اس رات اس علاقے میں بارش ہونے کی وجہ مسئلہ بنا ہوا تھا۔ ایرفورس کے ذمہ دار آفیسر سب پریشان تھے۔ اچانک میرے ذہن میں یہ بات آئی کہ بارش ہورہی ہے تو یقینا آسمان میں بادل ضرور ہونگے اور ان بادلوں کی وجہ سے ہمارے بمبار طیارے پاکستانی ریڈار میں آنے سے بچ بھی سکتے ہیں اس لئے میں نے ایر فورس کو اپنے مشن کو آگے بڑھانے کے لئے کہا اور تقریبا ڈھائی بجے صبح ہمارے بمبار طیارے بالاکوٹ کی طرف پرواز کرگئے۔ سب فکر مند تھے تقریبا سوا تین بجے صبح خبر آئی کہ ہمارے تمام بمبار طیارے بالاکوٹ جاکر، جیش محمد کے کیمپس کو تباہ کر بخیر وعافیت واپس اپنے بیس پہنچ چکے ہیں۔دوسرے دن مودی جی ہی کے دست راز دیش کے وزیر داخلہ شری امیت شاہ نے لوک سبھا عام انتخابی ریلی میں ایراسٹرائک 2 دیش کے ویر ایرفورس کے پاکستانی علاقہ بالا کوٹ میں گھس کر جیش محمد کے 300 آتنک وادیوں کو مار گرانے کا دعوہ کرتے ہوئے دیش کی عوام سے ووٹ مانگے تھے۔ 26 فروی سرجیکل اسٹرائک 2 کا حوالہ دیکریہ کوئی ایرا غیرا نتو خیرا اپنے یار دوستوں میں لمبی لمبی چھوڑتے ہوئے نہیں کہہ رہا تھا بلکہ دنیا کی سب سے بڑی جمہوریت ہندستان کا، جمہوری طور منتخب پرائم منسٹر، دیش کے نامور میڈیا ہاوس نیوز نیش کو براہ راست ٹیلی کاسٹ ہونے والے انٹرویو میں،بے پر کی چھوڑ رہا تھا۔ جس پر دیش کے ویگیانک تو شرمندہ ہوئے تو ہوئے، جدت پسند دنیا کے سامنے پی ایم ھند کی بے پر کی باتوں کی وجہ سے دیش کو شرمندہ ہونا پڑا تھا۔اور یہ سب جھوٹ افترا پروازی، سبھیتا پوروک رام راج قائم کرنے کی دعویدار، آر ایس ایس کی، ہند واسیوں میں پاکستان مخالف دیش بھگتی بھڑکا کر، دیش واسیوں کو اپنے جھوٹ افترا پروازی سے بے وقوف بناتے ہوئے، ای وی ایم گڑبڑی سے 2019 عام انتخاب جیتنے کی اپنی سازش کو، دیش بھگتی سے عام انتخاب جیتنا ثابت کرنے کی انکی سازش کا حصہ تھا جو نہ صرف دیش کے چناوی پنڈتوں کی پیشین گوئیوں بلکہ 2019 دیش کے مختلف صوبوں حصوں کے مختلف پولنگ بوتھ ہوئے ووٹنگ پیٹرن کے تناظر میں، انتخابی تجزیاتی رپورٹوں کے برخلاف،ای وی ایم چھیڑ چھاڑ کروانے والے ماسٹر مائنڈ شری امیت شاہ کی پیشین گوئی،300 پلس سیٹوں سے بی جے پی 2019 عام انتخاب جیت چکی ہے۔ بلکہ2019 عام انتخاب بعد بھی دیش کے عقل و فہم رکھنے والے رہنماؤں کے، ای وی ایم چھیڑ چھاڑ سے بی جے پی کے 2019 عام انتخاب جیتنے کی آواز مودی بھگت میڈیا کی آوازوں کے درمیان صدا بہ سحر ثابت ہوچکی ہے۔ بھگوان ایشور اللہ ہی حافظ الامان رہے اس بھارت دیش کا،ان جھوٹ افتراپرواز سنگھی سیاست دانوں کے رہتے ہوئے۔واللہ الاعلم بالتوفیق الا باللہ*

HTML Snippets Powered By : XYZScripts.com