Select your Top Menu from wp menus

وائس چانسلر اور اردویونیوورسٹی کو مبارکباد

وائس چانسلر اور اردویونیوورسٹی کو مبارکباد

ہزار برق گرے لاکھ آندھیاں اٹھیں
وہ پھول کھل کے رہیں گے جو کھلنے والے ہیں
(ساحر لدھیانوی)
مولانا آزاد نیشنل اردو یونی ورسٹی کو سرکردہ انگریزی جریدہ آﺅٹ لک نے مرکزی جامعات کی ملک گیررینکنگ میں 20واں مقام عطا کیا ہے۔ آﺅٹ لک نے آئی کیئرادارہ کے ساتھ مل کر یہ سروے کیا ہے۔ اس کامیابی کے مستحق وائس چانسلرا سلم پرویز صاحب ہی ہیں جواپنی غیرمتنازعہ ٹیم کے ساتھ اردو کی اس جامعہ کی کارکردگی کودن بہ دن بہتربنانے کے لیے کوشاں ہیں اور اردو تعلیم حاصل کرنے والوں کے لیے دن رات فکرمند ہیں۔ وائس چانسلر اسلم پرویز صاحب کی جانب سے اپنا عہدہ سنبھالنے کے بعد مانو میں کئی تبدیلیاں آئی ہیں خاص کر وہاں پرڈسپلن پرخصوصی توجہ دی گئی ہے۔ طلبہ کے لیے ڈسپلن کی بہت اہمیت ہوتی ہے ۔ یورسٹی کے معنی طلبہ صرف داخلہ لیکر سیروتفریح گھومنا پھرنا سمجھتے ہیں اس نظریہ کو وائس چانسلر اسلم پرویز صاحب نے بدل دیاہے اور بچوں کوبتایاکہ یہ وقت بہت قیمتی ہے اور اس کوصرف تعلیم کے لیے ہی استعمال کرناچاہیے ۔اس کے لیے کیمپس میں حاضری نظام کوبہتربنایاگیا اوراساتذہ کوجوابدہ بنایاگیا۔ جس کی وجہ سے تعلیمی کارکردگی بہترہورہی ہے اور بچے بھی مکمل توجہ تعلیم پردے رہے ہیں۔ اس کے علاوہ اردو کو سائنس سے جوڑنے کیلئے وائس چانسلراسلم پرویز نے کئی اقدامات کیے اور پچھلے تین سال سے قومی اردوسائنس کانگریس کامیابی سے منعقد کی جارہی ہے جس میں ملک کے مختلف مقامات سے ماہرین آکر یہاں طلبہ سے خطاب کررہے ہیں۔اردو مرکز برائے فروغ علوم کے کنسلٹنٹ ڈاکٹرعابد معز نے بھی اردوسائنس کانگریس کومنعقد کرنے میں پوری ذمہ داری نبھائی ہے اور جس کے بہت اچھے نتیجے نکلے ہیں۔2017ءمیں پہلی سائنس کانگریس کا بہت کامیاب رہی تھی اور اس میں ماہرین سائنس اوردیگرمشہور شخصیات نے شرکت کی تھی اور ان کیلئے حیدرآباد میں سماجی جہد کارارشدحسین کی جانب سے نوبل انفوٹیک لکڑی پرتقریب منعقد کی تھی تاکہ ان کو حیدرآبادی ادبی حلقوں سے ملایاجائے۔ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے ماہرین نے اپنے خطاب میں اسلم پرویز اورعابد معز کی کوششوں کوسراہا تھا لیکن 2018ءمیں منعقدہ دوسری سائنس کانگریس میں زیادہ لوگوں کوموقع نہیں ملاتھا کیو ںکہ اس وقت جن کو اس کی ذمہ داری دی گئی تھی ان لوگوں نے اپنی ذمہ داری صحیح نہیں نبھائی اورعابد معز کو صرف شریک کنویر بنایاگیاتھا ۔ یونیورسٹی کی جانب سے عابدمعز کی توضیحی فرہنگ (غذا اور تغذیہ )بھی شائع کیا ہے جوبہت ہی تحقیقی کام ہے۔ ایسی کتابیں اردو ادب میں وقت کا تقاضہ ہے۔ اردو میں عصری کتابوں کی کمی کومحسوس کرتے ہوئے اسلم پرویز صاحب نے نظامت ترجمہ واشاعت کا قیام عمل میں لایا اور ڈائرکٹر کے طورپر یونیورسٹی کے سب سے سلجھے ہوئے اور سمجھدار شخصیت پروفیسر محمدظفر الدین کا انتخاب عمل میں لایاگیا۔ جس کے تحت متعدد نصابی کتابیں اور علمی کتابوں کی اشاعت عمل میں لائی گئی اورحال ہی میں اس کی جان سے نصابی اور علمی کتابو ںکے سیلس کاﺅنٹر کا افتتاح بھی عمل میں آیا جہاں طلبہ کورعایت پرکتابیں فراہم کی جارہی ہے ۔ اس کے علاوہ دینی مدارس کے طلبہ کوبھی عصری تعلیم سے جوڑنے کی آپ نے کوشش کی ہے۔طلبہ کی غلط فہمیو ںکودورکرنے کیلئے طلبہ کو اپنے جوابی بیاض دکھانے کابھی انقلام قدم اٹھایا ہے۔ اسلم پرویز نے ڈسپلن اور اپنی کوششوں سے مانو میں کئی تبدیلیاں لائی ہیں آنے والے دنوں میں اس کے اوربہترنتائج آئیں گے۔ اردودنیا جومانو سے مایوس ہوجارہی تھی اسلم پرویز صاحب کی ان کوششوں سے لگ رہا ہے کہ بہت جلد ان کی مایوسی دور ہوجائے گی ۔علی گڑھ مسلم یونیورسٹی جہاں اسلم پرویز نے تعلیم حاصل کی ہے اس کو سروے میں چھٹا مقام حاصل ہوا ہے امید کہ چانسلر کی قیادت میں اسی طرح مانو بیسویں نمبر سے ایک نمبر کے مقام تک کا سفر جلد ہی طئے کرے گی۔ آﺅٹ لک نے سو بہترین یونیورسٹیوں کاایک اور سروے کیا ہے جس میں حیدرآباد کی پانچ یونیورسٹیو ں کوشامل کیاگیاہے۔ جوحیدرآبادیوں کے لیے فخر کی بات ہے۔ امید کہ مانو اور ترقی کی منزل طئے کرے گی اور سیول سرویس اورملک کے بڑے عہدوں پرمانو سے فارغ طلبہ نظرآئیں گے۔
توشاہیں ہے پرواز ہے کام تیرا
ترے سامنے آسماں اور بھی ہیں (علامہ اقبال)

محسن خان
حیدرآباد
ای میل: mohsin_246@yahoo.com
موبائیل: 9397994441