Select your Top Menu from wp menus

سب سے بزرگ 111 سالہ رائے دہندہ بچن سنگھ نے بھی جمہوریت کے اس عظیم تہوار میں حصہ لیا

سب سے بزرگ 111 سالہ رائے دہندہ بچن سنگھ نے بھی جمہوریت کے اس عظیم تہوار میں حصہ لیا

یو این آئی


نئی دہلی، 12 مئی : دہلی کی سات لوک سبھا سیٹوں پر اتوار کو ہو رہی پولنگ میں جہاں ایک طرف صدر رام ناتھ كووند، متحدہ ترقی پسند اتحاد کی صدر سونیا گاندھی، کانگریس صدر راہل گاندھی، لیفٹیننٹ گورنر انل بیجل اور وزیر اعلی اروند کیجریوال ووٹ ڈالنے والوں میں اہم رہیں، وہیں دوسری جانب دارالحکومت کے سب سے بزرگ 111 سالہ رائے دہندہ بچن سنگھ نے بھی جمہوریت کے اس عظیم تہوار میں حصہ لیا۔
دہلی انتخابی دفتر کی جانب سے حکام نے مسٹر سنگھ سے ہفتہ کو ملاقات کی تھی اور ان سے ووٹ ڈالنے کی اپیل کی۔ مغربی ضلع کے الیکشن افسر عظیم الحق نے مسٹر سنگھ سے ملاقات کی اور انہیں اعزاز سے سرفراز بھی کیا تھا۔ مسٹر سنگھ نے تلک وہار کے سنت گڑھ واقع پولنگ اسٹیشن پر اپنے حق رائے دہی کا استعمال کیا۔ وہ پولنگ اسٹیشن تک وہیل چیئر پر گئے۔
تین مہینے قبل فالج کے شکار ہوئے مسٹر سنگھ ویسے تو اپنی زندگی بستر پر ہی بسر کر رہے ہیں مگر ووٹ ڈالنے کے ان جذبے میں کوئی کمی نظر نہیں آئی۔ مسٹر سنگھ کا سب سے چھوٹا بیٹا جسبیر سنگھ (63) بھی سینئر شہری کے زمرے میں آتا ہے۔
سترہویں لوک سبھا کے لئے دہلی کی سات سیٹوں پر 100 سال سے زیادہ کی عمر کے ووٹروں کی تعداد 96 ہے۔ دہلی میں خواتین ووٹروں میں سب سے بزرگ 110 سالہ رام پیاری شنكھوار ہیں جو مشرقی دہلی کے كونڈلي علاقے کی رہنے والی ہیں۔