"دہلی تشدد” امن اور سلامتی کے لئے خود شناسی کی ضرورت ہے

0 28

 

مکرمی:دارالحکومت ہندوستان میں ہونے والے فرقہ وارانہ فسادات نے معاشرتی تانے بانے اور اس ملک کی ہم آہنگی کی ثقافت کو مکمل طور پر ہلا کر رکھ دیا ہے،جس کا مطلب یہ ہے کہ مارے جانے والے اور قاتل دونوں ہی انسان تھے۔ شہری اس حقیقت سے آنکھیں بند نہیں کرسکتے ہیں کہ بے قصور ہونے کے بائوجود مسلمان اور ہندوؤں دونوں کوظلم اور بے رحمی کے ساتھ مارا گیا۔تشدد کے ارتکاب کرنے والے اس سے انکار نہیں کرسکتے کہ بے گناہ لوگوں کی ناحق قتل و غارت گری وہ حرکتیں ہیں جو شیطان کو خوش رکھتی ہیں اور رب کائنات کے لئے ناخوشی کا باعث ہیں۔دہلی میں فرقہ وارانہ تشدد میں بے گناہ شہریوں کی بے ہلاکتوں کے بعد اب وقت آگیا ہے کہ مسلمانوں سمیت ہر شخص تشدد کے راستے سے پرہیز کرتے ہوئے اور امن اور معاشرتی بھائی چارے کی راہ اپناتے ہوئے باہمی منافرت کو حل کرے۔ عوام کو چاہئے کہ وہ اللہ پاک کی طرف توجہ دیں،بڑے پیمانے پر ملک و دنیا میں سلامتی،سلامتی، خوشی اور امن کی دعا کریں۔انہیں خود کو جانچنا چاہئے کہ وہ لوگوں کو دھوکہ دے سکتے ہیں لیکن خداتعالیٰ کو دھوکہ نہیں دے سکتے جو ہر ایک کے کاموں اور ارادوں سے واقف ہے۔ معاشرے کو برادریوں کے مابین تلخی کو فراموش کرنا ہوگا ، جس کی وجہ سے بڑے پیمانے پر تشدد ہوا ہے اور پہلے سے کہیں زیادہ طاقتور کثیر الثقافتی اور پرامن کثرتیت کے ساتھ زندگی کو نئے سرے سے شروع کرنا ہے۔ لوگوں کو خدائی حکم پر یقین کرنا ہوگا ، "اے میرے بندے ، جنہوں نے [گناہ کرکے) اپنے آپ سے سرکشی کی ہے ، اللہ کی رحمت سے مایوس نہ ہوں ، بے شک اللہ سبھی گناہوں کو معاف کرتا ہے ، بے شک وہی معاف کرنے والا ہے ، مہربان(39:53) قرآن مجید کی یہ آسمانی آیت شہریوں کو ان کی خود ارادیت اور پھر اصلاح میں مثبت رکھنے کے لئے نمایاں طور پر کام کرتی ہے۔

محمد جاوید
نئ دہلی

Leave A Reply

Your email address will not be published.