غزل

0 34

پریم ناتھ بسمل
مرادپور، مہوا، ویشالی۔ بہار
رابطہ۔8340505230
محفل سجی ہے آج بڑے اہتمام سے
لیکن گریز پا ہوا دل دھوم دھام سے
کیوں آج اس بہار میں دل کو نہیں سکوں
کیوں آج دل دہلتا ہے ساقی و جام سے
اپنی نظر میں آپ ہی رسوا ہوئے ہیں ہم
دنیا پکارتی ہے مگر احترام سے
دے کر کے ہر خوشی مجھے جاں سے گزر گئی
آنکھیں ہیں اشکبار مری پچھلی شام سے
مرتا ہے کوئی، تو مرے! دنیا کو اس سے کیا؟
فرصت نہیں کسی کو یہاں اپنے کام سے
اس بے دلی کے پیار سے اب بھر چکا ہے دل
میں تنگ آچکا ہوں جہاں کے نظام سے
جائے گا سب سے دور یہ بسمل بھی ایک دن
سب بھاگتے ہیں کیوں ابھی بسمل کے نام سے
٭٭٭

Leave A Reply

Your email address will not be published.